’’ پاکستانی خلیجی ممالک کے لیے خطرہ ہیں ، انہیں بھی بنگالیوں کی طرح۔۔۔۔۔۔۔‘‘ دبئی کے سکیورٹی سربراہ نے پاکستانیوں کے بارے میں ایسی بات کہہ دی کہ پوری قوم دنگ رہ گئی

دبئی :جنرل سکیورٹی کے سربراہ اور لیفٹننٹ جنرل دھاہی خلفان نے مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پراپنے پیغامات میں نسل پرستی پر مبنی ٹویٹ کرتے ہوئے پاکستانیوں کو تنقید کا نشانہ بنایا۔ یہ ٹویٹس تب سامنے آئے جب دبئی حکام نے منشیات اسمگل کرنے والے ایک پاکستانی گروہ کو گرفتار کیا۔ دبئی جنرل سکیورٹی کے سربراہ کے تعصبانہ ٹویٹس دیکھ کر ایسا لگتا ہے

کہ دبئی حکام نے دنیا بھر میں موجود پاکستانیوں کو منشیات اسمگل کرنے والے اس پاکستانی گروہ کے گھناؤنے فعل کا ذمہ دار ٹھہرا دیا ہے۔یکم اپریل کو دھاہی خلفان نے اپنے ٹویٹر پیغام میں گرفتار کیے گئے اس پاکستانی گروہ کی تصویر پوسٹ کی اور کہا کہ پاکستانی خلیج ممالک کے لیے ایک خطرہ ہیں کیونکہ وہ اپنے ملک سے منشیات لاتے اور اسمگل کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں خلیجی ریاستوں کے داخلی راستوں پر سخت سکیورٹی کا اہتمام کرنا چاہئیے۔میں شہریوں کو تجویز دیتا ہوں کہ وہ پاکستانی شہریوں کو بطور ملازم نوکری پر نہ رکھیں۔پاکستانیوں کو نوکری پر نہ رکھنا اب ہمارا قومی فرض بن گیا ہے۔بھارتی شہری کیسے منظم ہیں جبکہ پاکستانی معاشرے میں جرائم اور اسمگلنگ جیسے گھناؤنے جرائم پنپ رہے ہیں۔جرائم پیشہ رجحانات کی وجہ سے ہی ہم نے بنگالی شہریوں پر سختی کی۔ ایسے ہی پاکستانی شہریوں پر بھی اعلیٰدرجے کی نظر رکھی جانی چاہئیے۔دبئی جنرل سکیورٹی کے سربراہ کے ایسے تعصبانہ ٹویٹس یا تو منشیات اسمگل کرنے کی کوشش کرتے ہوئے پکڑے جانے والے پاکستانی گروہ پر غصے کی ایک کڑی ہیں ، یا اس کی وجہ سعودی عرب کی جانب سے اسلام آباد کو ”ٹیرارزم فنانسنگ لسٹ” میں شامل کرنے کے لیےسعودی عرب کی جانب سے ڈالے گئے ووٹ پر رد عمل ہے۔ اپنے ٹویٹس میں لیفٹننٹ جنرل دھاہی کا پاکستانیوں کا بنگالیوں سے موازنہ ایک خطرے کی گھنٹی بھی ہو سکتا ہے، چونکہ بنگالیوں کودور حاضر میں بہت مشکل سے متحدہ عرب امارات میں ورک ویزا دیا جاتا ہے، ہو سکتا ہے کہ یہ موازنہ کسی نئی قانون سازی یا کسی نئی تجویز کی منظوری کی طرف اشارہ ہو۔