supreme court of pakistan

15 دن میں یہ کام کر دیں ورنہ چینل کو بند کر دیں گے۔۔۔سپریم کورٹ نے یہ حکم کس نجی چینل کو جاری کر دیا؟ بریکنگ نیوز آ گئی

اسلام آباد سپریم کورٹ میں صحافیوں کی تنخواہوں کی ادائیگی میں تاخیر سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔ اس موقع پر ایک نجی ٹی وی چینل سے منسلک صحافیوں نے بتایا 2 ماہ سے تنخواہیں نہیں ملیں۔ نجی چینل کے وکیل نے کہا صرف فروری اور مارچ کی ادائیگیرہ گئی ہے ۔اس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کیا آپ یہ کہنا چاہتے ہیں ان کے گھروں کے چولہے نہ جلیں۔

چیف جسٹس نے 15 دنمیں تنخواہوں کی ادائیگی کا حکم دیتے ہوئے کہا ادائیگی نہ کی گئی تو چینل بند کر دیں گے۔ سینئر صحافی حامد میر نے بتایا 2 ماہ کی تنخواہیں ان کے ادارے میں بھی نہیں ملیں۔ ایک اور نجی چینل کے وکیل نعیم بخاری نے عدالت میں کہا ایک بار کہا تھا وکیل مقدمہ نہیں ہارتا بلکہ موکل ہارتا ہے ۔ خود کو سٹپنی وکیل بھی کہا لیکن ایسے الفاظ پر معذرت چاہتا ہوں ۔دوسری جانب شریف خاندان کے خلاف ایون فیلڈ ریفرنس میں جے آئی ٹی سربراہ واجد ضیاء پر جرح کے دوران نواز شریف کے وکیل کے سوال پر کمرہ عدالت میں قہقہے گونج اٹھے جب کہ ایک موقع پر واجد ضیاء نے کہا کہ حیران ہوں والیم 10 پر آپ کی معلومات مجھ سے زیادہ ہے۔احتساب عدالت کے جج محمد بشیر ایون فیلڈ ریفرنس کی سماعت کر رہے ہیں اس موقع پر نامزد ملزمان سابق وزیراعظم نواز شریف، ان کی صاحبزادی مریم نواز اور داماد کیپٹن (ر) محمد صفدر عدالت میں پیش ہوئے۔سماعت کے آغاز پر نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث نے واجد ضیاء پر جرحکے دوران جے آئی ٹی رپورٹ کے والیم ٹین سے متعلق استفسار کیا جس پر واجد ضیاء نے بتایا کہ والیم ٹین کی کاپی کے لئے اپلائی کیا تھی اور وہ مل گئی ہے اور سات ایم ایل ایز سے متعلق ریکارڈ مل گیا ہے۔

اس موقع پر پراسیکیوٹر جنرل نیب سردار مظفر عباسی نے سات ایم ایل ایز پر خواجہ حارث کے سوال پر اعتراض اٹھایا اور کہا کہ ایک ہی سوال بار بار نہیں پوچھا جاسکتا۔نہ سوال ریکارڈ پر آسکتا ہے نہ جواب، صرف واجد ضیاء کا بیان ریکارڈ پر آسکتا ہے، خواجہ حارث۔خواجہ حارث نے کہا کہ آپ میرا سوال ریکارڈ پر لے آئیں، یہ جواب نہیں دینا چاہتے تو نہ دیں جس پر نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ سوال بھی ریکارڈ پر نہیں آسکتا۔خواجہ حارث نے کہا ‘نہ سوال ریکارڈ پر آسکتا ہے نہ جواب، صرف واجد ضیاء کا بیان ریکارڈ پر آسکتا ہے’ خواجہ حارث کے جملے پر کمرہ عدالت میں قہقہے گونج اٹھے۔ جے آئی ٹی سربراہ نے عدالت کے روبرو والیم ٹین سے متعلق وضاحت دیتے ہوئے بتایا کہ سربمہر والیم ٹین کا باہمی قانونی مشاورت کے تحت 7 خطوط کا ریکارڈ ملا ہے اور مکمل والیم ٹین نہیں ملا۔نواز شریف کے وکیل نے کہا کہ ‘آرڈر میں واضح کردیں کہ مکمل والیم 10 پیش نہیں کیا گیا جس پر واجد ضیاء نے کہا مجھے مکمل بات کرنے دیں، خواجہ حارث نے کہا کہ میں فارسی یا عربی میں نہیں بلکہ اردو میں پوچھ رہا ہوں۔واجد ضیاء نے بتایا کہ باہمی مشاورت قانون کے تحت 7 خطوط میں 1980 کے معاہدے کا ریفرنس دیا ہے جس پر نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث نے کہا ‘واجد صاحب آپ مؤقف بدل رہے ہیں’۔

واجد ضیاء نے کہا کہ میں مؤقف نہیں بدل رہا، خواجہ حارث نے کہا کہ آپ اپنا مؤقف بدلیں گے انشاءاللہ اور حقیقت کی طرف آئیں گے۔نیب پراسیکیوٹر نے پھر مداخلت کی اور خواجہ حارث کو کہا کہ گواہ سے براہ راست بات نہ کریں، تین دن سے آپ ایک ہی سوال کر رہے ہیں۔جس پر خواجہ حارث نے کہا کہ آپ کو اعتراض ہے تو الگ بات ہے، میں سوال ضرورکروں گا، جب گواہ جھوٹ بولے گا تو سچ اگلوانے کے لئے سوال کرناپڑیں گے، جرح میں سچ اگلوانےکیلئے مختلف زاویوں سے سوال پوچھے جاتے ہیں۔نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ سوال قانون شہادت کیخلاف جائے گا تو میں ضرور ٹوکوں گا۔نواز شریف کے وکیل نے سوال کیا کہ ‘باہمی مشاورت قانون کے تحت کون سے خطوط میں قانونی سوال پوچھےگئے اور کون سے خطوط انٹرنیشنل کارپوریشن ڈیپارٹمنٹ کو لکھےگئے جس پر واجد ضیاء نے بتایا کہ 4 خطوط میں قانونی سوال پوچھے گئے اور چاروں خطوط 15 جون 2017 کو لکھے گئے۔حیران ہوں آپ کو والیم ٹین کی مجھ سے زیادہ معلومات کیسے ہیں، واجد ضیاء۔ واجد ضیاء نے بتایا کہ 12 جون 2017 کو سینٹرل اتھارٹی کو ایک ایم ایل اے بھجوائی گئی جس کے ساتھ متعدد دستاویزات بھی بھجوائی گئیں اور دستاویزات میں 1978 کا معاہدہ بھجوایا تھا۔