ڈپٹی کمشنر گجرانوالہ سہیل ٹیپو کی پراسرار ہلاکت، اہلخانہ نے ایسا سوال کھڑا کر دیا کہ تخت لاہور لرز اٹھا

لاہور:سہیل ٹیپو کی موت، اہل خانہ کے اصرار کے باوجود آئی ایس آئی اور آئی بی کے افسر کو جی آئی ٹی میں شامل نہیں کیا گیا۔واضح رہے کہ،آر پی او ملتان محمد ادریس کی سربراہی میں قائم کی گئی جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم نے سابق ڈی سی گجرانوالہ سہیل احمد ٹیپو کی موت کو خودکشی قرار دے دیا ہے اس حوالے سےموقر قومی اخبار سے گفتگو کرتے ہوئے

آر پی او محمد ادریس نے کہا کہ انہوں نے ٹیم کے ہمراہ جائے وقوعہ کا تفصیلی ملاحظہ کیا اور شواہد اکٹھے کئے گئے اور فرانز ک ٹیسٹ کے لئے نمونے لاہور بھجوائے گئے جبکہ پوسٹ مارٹم رپورٹ کا جائزہ لیا گیا اور ڈی سی ہاؤس کے تمام ملازمین کے بیانات بھی لئے گئے آر پی او نے بتایا کہ دوران تفتیش متعدد مشکوک افراد کے پولی گرافک ٹیسٹ کروائے گئے اور ٹی وی اینکر کو بھی بیان کے لئے بلایا گیا مگر وہ نہ آئے تمام شواہد اکٹھے کرنے کے بعد ثابت ہوا ہے کہ سہیل احمد ٹیپو کو قتل نہیں کیا گیا ہے سہیل احمد ٹیپو کے خاندان کی جانب سے تفتیش پر اتفاق کرنے کے سوال کا جواب دیتے ہوئے آر ی او نے کہا کہ ان کی فیملی قتل کا شبہ ظاہر کر رہی تھی جس پر ان سے ثبوت مانگے گئے اور مشتبہ افراد سے تحقیقات بھی کی گئیں تاہم کوئی ٹھوس ثبوت نہیں مل سکا جس کے بعد سہیل احمد ٹیپو کی فیملی کو تفصیلی بریف کیا ہے اور واقعہ کی تفصیلی رپورٹ حکومت پنجاب کو بھجوا دی گئی ہے۔