chief justice saqib nisar

بس بہت ہو گیا اب یہ کام نہیں کرنے دیں گے۔۔۔چیف جسٹس آف پاکستان نے بڑے بڑوں کے چھکے چھڑا دینے والا اعلان کر دیا

لاہور:چیف جسٹس سپریم کورٹ جسٹس میاں ثاقب نثار نے غیرقانونی شادی ہال کا نوٹس لیتے ہوئے کہا کہ شادی ہالزکے نام پرغیرقانونی قبضے کی اجازت نہیں دینگے، عدالت تعین کرےگی کہ شادی ہال کیلئے کم ازکم کتنی جگہ ہونی چاہیے۔ چیف جسٹس پاکستان نے سپریم کورٹ رجسٹری میں غیرقانونی شادی ہالزسے متعلق ازخودنوٹس کی سماعت کرتے ہوئے

ریمارکس دیے کہ کسی غیر قانونی شادی ہال کو نہیں رہنے دیں گے،انہوں نے کہا کہ پہلے سےموجودشادیہالزکوریگولرائزکرنے کیسفارشات کا جائزہ لیں گے،شادی ہالزکے نام پرغیرقانونی قبضے کرکے پلازے کھڑے کرنے کی اجازت نہیں دی جائیگی۔ چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ عدالت تعین کرےگی کہ شادی ہال کیلئے کم ازکم کتنی جگہ ہونی چاہیے۔دوسری جانب چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے وزراء اور سرکاری افسران کے زیر استعمال لگژری گاڑیوں کے استعمال کا از خود نوٹس لے لیا۔سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں چیف جسٹس ثاقب نثار نے وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق کی بریفنگ کے دوران لگژری گاڑیوں کے استعمال کا نوٹس لیا۔چیف جسٹس پاکستان کی سربراہی میں 2 رکنی بنچ نے ملک بھر کے وفاقی اور صوبائی محکموں سے لگژری گاڑیوں کے استعمال پر رپورٹ طلب کرلی ہے۔چیف جسٹس نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ بتایا جائے کتنے وفاقی وزراء معتین کردہ حد سے زیادہ گاڑیاں استعمال کر رہے ہیں اور کتنے سرکاری افسران کے زیر استعمال عہدے کے حساب سے متعین کردہ حد سے زائد لگژری گاڑیاں ہیں۔سپریم کورٹ نے تمام صوبوں کے کابینہ سیکرٹریز اور وفاقی سیکرٹریز کابینہ کو رپورٹ جمع کروانے کا حکم دیا ہے۔چیف جسٹس آف پاکستان ثاقب نثار نے تمام صوبوں کے ہائیکورٹ کے چیف جسٹسز کے زیر استعمال لگژری گاڑیوں کی بھی رپورٹ طلب کرلی ہے اور تمام ہائیکورٹس کے رجسٹرار کو بھی 15 دنوں میں رپورٹ جمع کروانے کا حکم دیا ہے۔اس موقع پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ صحت اور تعلیم کی صورتحال خراب ہے اور افسران لگژری گاڑیوں سے لطف اندوز ہورہے ہیں۔