اسے بھی لے کر آ ؤ ۔۔۔ نیب نے شریف خاندان کے ایک اور فرد کو کٹہرے میں بلا لیا، یہ شخص کون ہے ؟ اور اس کا شریف فیملی کے ساتھ کیا تعلق ہے؟؟ صبح صبح ناقابل یقین خبر آ گئی

لاہور:صاف پانی کمپنی سکینڈل میں وزیر اعلیٰ پنجاب کے داماد عمران علی آج نیب کی مشترکہ تفتیشی ٹیم کے سامنے پیش ہونگے ۔ان پر الزام ہے کہ انہوں نے سابق چیف فنانس افسر پنجاب پاور ڈیویلپمنٹ کمپنی سے 12 کروڑ روپے کی کک بیکس وصول کیں ۔نیب کے ڈپٹی ڈائریکٹر کوآرڈی نیشنافسر نوید شفقت کی جانب سے عمران علی کو طلبی کا نوٹس جاری کیا گیا ۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اکرم نوید کو عمران علی نے پہلے مبینہ طور پر پنجاب پاور کمپنی میں تعینات کروایا بعد ازاں انہیں صاف پانی کمپنی میں بھجوا دیا ۔آن لائن کے مطابق نیب نے لاہور پارکنگ کمپنی میں مبینہ خورد برد کے الزامات کے تحت سابق ایم ڈی تاثیر احمد اور جی ایم فیضان ولی کو ریکارڈ سمیت طلب کرلیا ہے ۔ علی عمرانواضح رہے کہ برطانوی حکومت نے شریف خاندان کی ایون فیلڈ فلیٹس لندن کی ملکیت بارے ناقابل تردید ثبوت نیب حکام کے حوالے کردئیے ہیں جو اسی ہفتے احتساب عدالت میںپیش کردئیے جائیں گے ۔ نیب ذرائع نے بتایا کہ برطانیہ کے سرکاری محکمہ نے تصدیق شدہ دستاویزات دی ہیں جن میں یہ حقائق سامنے آئے ہیں کہ 1993ء میں حسن نواز، حسین نواز اور مریم نواز نے ان فلیٹس کیلئے حاصل کیے گئے پانی کے کنکشن کے بل دا کئے تھے اور بلوں کی ادائیگی کی رسیدیں اب نیب حکام کو حاصل ہوگئی ہیں۔نیب ذرائع نے یہ بھی بتایا کہ1993ء میں حسن نواز، حسین نوازاور مریم نواز نے لندن فلیٹس کے حوالے سے برطانوی حکومت کو انکم ٹیکس بھی ادا کیا تھا۔جس کی دستاویزات بھی برطانوی حکومت نے نیب کے حوالے کردی ہیں۔ نیب حکام نے بتایا ہے کہ ایون فیلڈ کرپشن ریفرنس میں یہ دستاویزاتی ثبوت عدالت میں پیش کردئیے جائیں گے

جس کے بعد ان فلیٹس کی ملکیت کا معاملہ ختم ہوجائے گا کیونکہ 1993ء میں نواز شریف کے تینوں بچوں جن کی عمریں کم سن تھیں اور یہ تینوں بچے نواز شریف کی زیر کفالت تھے اور فلیٹس نواز شریف نے ہی اپنے بیٹوں کے نام پر خریدے تھے ۔نیب حکام کے مطابق یہ دستاویزاتی ثبوت بہت جلد ایون فیلڈ ضمنی ریفرنس کی سماعت کے دوران احتساب عدالت میں بطور شہادت پیش کیے جائیں گے کیونکہ یہ کاغذات برطانوی حکومت کے تصدیق شدہ ہیں ۔ نیب حکام نے بتایا کہ چیئرمین نیب نے پہلے ہی کہہ دیا تھا کہ کرپشن مقدمات کا ڈراپ سین ہونیوالا ہے اور یہ ڈراپ سین ایون فیلڈریفرنس میں برطانوی حکومت کی طرف سے دی گئی شہادتوں کو ریکارڈ کا حصہ بنانے سے ہوگا ، نواز شریف پر یہ ثابت ہو جا ئے گاکہ انہوں نے قومی دولت لوٹ کر منی لانڈرنگ کے ذریعے یہ فلیٹس خریدے تھے اور اسی حوالے سے شریف خاندان اپنی کرپشن بچانے کیلئے مبینہ طور پر آرڈیننس لا کر نیب کو بند کرنا چاہتا ہے۔